Horror Story | کالا جادو کرنے والی عورت کی عبرتناک موت

history of black magic
Written by kahaniinurdu

کالا جادو کرنے والی عورت کی عبرتناک موت

بحثیت ڈاکٹر میری پیشہ ورانہ زندگی میں سب سے عبرت ناک موت میری اس مریضہ کو آ رہی تھی ۔ اسے دیکھ کر مجھ سمیت سارا عملہ اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگ رہا تھا ۔ مریضہ کا نام ثمرہ تھا ثمرہ کو فالج کا اٹیک ہوا تھا ۔ فالج کے اٹیک کی وجہ سے ثمرہ کا دل سکڑتا جا رہا بطور ڈاکٹر میں جانتا تھا ثمرہ کا بچنا اب نا ممکن ہے ۔ لہذا میں نے اپنی مریضہ ثمرہ کے بیٹے مسعود کو بتا دیا تھا۔ کہ آپ کی والدہ کے پاس فقط ایک ہفتہ ہے ۔ میں ادویات لکھ کر دے دیتا ہوں آپ انہیں گھر لے جائیں جب تکلیف ہو تو دوا کھلا دیں ۔ ۔

میری بات ابھی مکمل نہیں ہوئی تھی کہ مسعود پہلے مسعود کی بیوی اور ثمرہ کی چہتی بہو بول اٹھی تھی ۔ نہیں ثمرہ کو گھر نہیں لے جا سکتے ثمرہ جب تکلیف کی شدت کی وجہ سے آہ بکا کرتی ہے ۔ تو میری نیند خراب ہو جاتی ہے اور بچے بھی ڈر جاتے ہیں ۔ ثمرہ کی بہو کے ثمرہ کے بارے میں کہے گئیے الفاظ سن کر بے اختیار میرے ہاتھ کانوں تک گئیے تھے ۔ میرے منہ سے استغفرُللہ نکلا تھا میں مسعود کی طرف دیکھا جو سر جھکائے بے بس کھڑا تھا ۔ جیسے بیوی کے فیصلے کی تائید کرنے کے لئے ہمت جمع کر رہا ہو ۔

جب مسعود مخاطب ہوا تو اس نے اپنی ماں کے لئیے الفاظ میں اپنی بیوی سے بھی کم ہمدردی جتائی ۔ کہا کہ جب میری ماں مر جائے تو مجھے کال کر دینا میں ایدھی والوں سے کہوں گا وہ لاش وصول کر لیں گے ۔ جبکہ آپ کی فیس آپ کو کل مل جائے گی اور پھر واقع ہی کل ایک بلینک چیک میری میز پر تھا ۔ دوسری طرف مریضہ کی حالت انتہائی خراب تھی ۔ اچانک سے تکلیف کی شدت بڑھ جاتی کبھی مریضہ کہتی میرے بیٹے مجھے کفن نہ پہناؤ میں زندہ ہوں ۔

کبھی کہتی میری قبر بہت تنگ ہے ۔ میں اس میں نہ رہ سکتی کبھی مریضہ کو لگتا کہ بہت بڑا ? سانپ مریضہ کو ڈسنے لگا ہے ۔ مریضہ کی حالت اور باتیں سن کر مریضہ کے سر پر بیٹھی اٹینڈنٹ خوفزدہ ہو کر بھاگ جاتی ۔ مریضہ کو آج ہسپتال میں تیسرا دن تھا اور تین دن سے مسلسل سارا عملہ اتنا خوفزدہ ہو چکا تھا ۔ کہ فیمیل نرسز نے ہسپتال میں مزید کام کرنے سے انکار کر دیا ۔ مریضہ کی آہ بکا سے باقی مریض بھی پریشان تھے ۔ عورتیں انتہا کی خوفزدہ تھیں مریضہ کا دل آدھے سے زائد سکڑ چکا تھا خون کی سپلائی کم ہو چکی تھی ۔

مریضہ کی تکلیف میں اضافہ ہو چکا تھا۔ مقام حیرت تھا کہ پھر کبھی مریضہ کا بیٹا اور بہو ہسپتال نہیں آئے تھے ۔ اب میری مریضہ کا آخری وقت قریب تھا ۔ میں نے مریضہ کے کمرے میں تعینات نرس کو قرآن پاک پڑھنے اور باوضو رہنے کی تلقین کر رکھی تھی ۔ میں میڈیکل علاج معالجے کے ساتھ روحانی علاج معالجے کا بھی قائل ہوں میں چاہتا تھا ۔ اس کلام کے صدقے ہی سہی مگر میری مریضہ کا آخری وقت پر سکون ہو ۔ تلاوت قرآن سے مریضہ بہت حد تک پر سکون رہنے لگی ۔کالا جادو

مگر اب بھی سانپ قبر کفن بچھو اور موت کا خوف اس پر سوار تھا ۔ قارئین کرام یقین کریں جب مریضہ کا دل مکمل سکڑ کر سپلائی دینا بند کر گیا تو مریضہ کی رنگت انتہائی خوفناک ہو گئی تھی ۔ مریضہ کی موت واقع ہوئی تھی انتہائی عبرت ناک مناظر تھے ۔ جب مریضہ کے بیٹے کو اطلاع دی گئی تو اس نے یہ کہتے ہوئے آنے سے انکار کر دیا کہ وہ بزنس کے سلسلے میں شہر سے باہر ہے ۔ مریضہ کی بہو نے بھی ہسپتال میں آنا مناسب نہ سمجھا۔ مجبورا مریضہ کی لاش ایدھی والوں کے حوالے کرنا پڑی ۔

یقین کریں مریضہ کی جب آخری سانسیں چل رہی تھیں ۔ تب ہی مریضہ کے جسم سے بوسیدہ لاش جیسا تعفن آٹھ رہا تھا ۔ مریضہ کی موت کے بعد میں تحقیق کی تو پتہ چلا کہ مریضہ کالا جادو کروا کر لوگوں کو اذیت سے دو چار رکھتی تھی ۔ بلکہ مریضہ نے کالے جادو کے ذریعے سے کئی لوگوں کو اپاہج اور کئی کی جان لی تھی ۔

میری دعا ہے اللہ سب کو شیطان کے شر سے محفوظ رکھے آمین ۔

قارئین کرام اس بات ثابت ہوتا ہے کہ جادو کے ذریعے کسی بے گناہ اور معصوم کو بھی نقصان پہنچانا کتنا بڑاگناھ ہے ۔ میری دعا ہے اللہ تعالی ہمیں اور آپ کو ایسے لوگوں کے شر سے اللہ رب العزت ھمیشہ محفوظ رکھے ۔ ۔ ۔ آمین

⇓  مزید پڑھنے کیلئے یہاں کک کریں

Leave a Comment